اہم ترینبین الاقوامی پراپرٹی

سال 2014 کے بعد سے کوویڈ کے باوجود دبئی کی پراپرٹی مارکیٹ میں ایک بار پھر تیزی

دبئی کی پراپرٹی مارکیٹ چھ سال کی پریشانی سے “لاک ڈاؤن ڈوجرز” کی حیثیت سے طاقت پیدا کررہی ہے اور متمول بین الاقوامی سرمایہ کاروں میں خریداری کا جنون چل پڑا ہے جو ریکارڈ توڑ رہا ہے اور معاشی بحالی کو ہوا دے رہا ہے۔

یورپی خریداروں کیلئے خاص طور پر دبئی کے دستخطی پام جمیرا انسانی ساختہ جزیرے اور لگژری ولاز دبئی پراپرٹی مارکیٹ میںں سب سے زیادہ پرکشش ہیں جہاں وہ گھر کی تلاش میں ہیں، اس کے ساتھ ساتھ خریداروں کا رخ گولف کورس اسٹیٹ کی طرف بھی کافی زیادہ نظر آرہا ہے۔

کنسلٹینسی پراپرٹی مانیٹر کے چیف آپریٹنگ آفیسر ژان زوچینکے نے کہا ہے کہ دبئی کی رولر کوسٹر پراپرٹی مارکیٹ ، جو 2014 سے مستقل زوال کا شکار تھی ، اور گذشتہ سال کوویڈ 19 کے بعد سے فلیٹ لائن میں چلا گیا تھا اور امارات کو اپنی سرحدیں بند کرنا پڑگئیں۔

انہوں نے بتایا کہ پھر اس لاک ڈاؤن کے بعد سے ہی لین دین کے حجم میں اضافہ شروع ہوگیا ، اور یہ تیزی اب تک جاری ہے۔”

“اب ہم مہینے میں ریکارڈ فوائد اور لین دین کی مقدار دیکھ رہے ہیں۔”

خلیج امارات گذشتہ جولائی میں ٹوورسٹ کے لئے دنیا بھر میں دوبارہ کھولنے والی پہلی منزل قرار پایا ، جس نے ماسک پہننے اور سوشل ڈسٹنسنگ پر سخت قوانین کے ساتھ اوپن ڈور پالیسی اپنائی ، اور ایک پُرجوش ویکسی نیشن پروگرام بھی شروع کیا جس نے عالمی سطح پر کافی زیادہ پذیرائی سمیٹی۔

نئے سال میں کورونا وائرس کے معاملات میں اضافے کے باوجود چھٹیاں گزارنے والے افراد نے بڑے پیمانے پر یہاں وزٹ کیا ، اور یہاں ریستوران اور ہوٹلز کے ساتھ ساتھ معمولات زندگی عام طریقے سے ہی جاری ہیں، بس ان پابندیوں نے کہیں نا کہیں معمولاتِ زندگی کو دھندلا دیا ہے۔

Tell to Others
0Shares
Tags

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker